غزل | دعویٰ ہے گر محبت کا تو بے سبب ساتھ چلو


غبارِ آوارہ کی مانند، بے سمت منزل کی جانب
میں تھک گیا ہوں چلتے چلتے، تم اب ساتھ چلو

 
تنہا چلو تو گلستاں میں بھی دشت سی وحشت
کانٹوں کی رہگزر بھی گلزار بنے جب ساتھ چلو

 
اندیشہ انجام کیسا، یہ ان کہے سوال کیونکر؟
دعویٰ ہے گر محبت کا تو بے سبب ساتھ چلو

 
اسی امید پہ ہوں پیہم سفر میں اے دوست
کبھی قصد سفر کرو تو کیا عجب ساتھ چلو
دن گزر جاتا ہے زمانے کے جھمیلوں میں
بہت طویل ہے مگر مسافتِ شب، ساتھ چلو

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: