طفل تسلیوں سے دل بہل رہا ہے


طفل   تسلیوں    سے   دل    بہل   رہا    ہے آج    کل    سب     ٹھیک    چل    رہا    ہے پرائے     گھر     جو    لگائی     تھی    کل آج   اسی  آگ  سے  اپنا  گھر  جل  رہا  ہے واقعہ   جان  کر …

Advertisements

غزل | دعویٰ ہے گر محبت کا تو بے سبب ساتھ چلو


غبارِ آوارہ کی مانند، بے سمت منزل کی جانب میں تھک گیا ہوں چلتے چلتے، تم اب ساتھ چلو   تنہا چلو تو گلستاں میں بھی دشت سی وحشت کانٹوں کی رہگزر بھی گلزار بنے جب ساتھ چلو   اندیشہ انجام کیسا، یہ ان کہے سوال کیونکر؟ دعویٰ ہے گر محبت کا تو بے سبب …

نظم | ندیا پار رہتا ہوں


تم سے جب دور ہوتا ہوںبہت مجبور ہوتا ہوںکچھ کر نہیں سکتاکچھ کہہ نہیں سکتاسچ کہوں میں تم سےاب دور رہ نہیں سکتاشدتِ تنہائی سے جبچُور ہوجاتا ہوں میںتمھارے اتنا پاس ہوتا ہوںکہ خود سے دور ہوجاتا ہوں میںپھر یادوں کے سفینے پرمہتاب کے سینے پرخوابوں کی سیر کو نکلتا ہوںخواہشوں کی رہگزر پہ ٹہلتا …

نظم | تمھارے لئے کیا لکھیں


آرزوئے وصل کریں کہ حرفِ دعا لکھیںمسئلہ یہ ہے کہ تمھارے لئے کیا لکھیںتمھارے لبوں کی تعریف کریں یا گالوں کو پھول لکھیںتمھاری قامت پہ ہو گفتگو کہ گیسوؤں کو بادلوں کی دھول لکھیںتمھاری مسکراہٹ کو تشبیہ دیں، چاندنی کے کھلنے سےیا تیوری کو غمزہ و غشوہ و ادا لکھیںمسئلہ یہ ہے کہ تمھارے لیئے …

غزل|دل کا بازار سجا رہا ہوں میں


خوابوں   کے  انبار  لگا  رہا  ہوں میںدل    کا   بازار  سجا   رہا   ہوں   میںآ   پھر  سے   میری   دنیا  اُجاڑ    دےبہت  آج   کل   مسکرا  رہا   ہوں   میں روکنا  ہو  تو  اب  روک  لے  مجھ  کوتیری محفل سے اٹھ کے جا رہا ہوں میںہرچند تجھ …

غزل | تیری عنایتوں پہ گلہ نہیں ہرچند بے معنی و بے اثر ہیں


تیری عنایتوں پہ گلہ نہیں ہرچند بے معنی و بے اثر ہیںکہ میرا  کُل اثاثہ ،  لفظ  ہیں یہی ، سو  تیری  نذر  ہیںخود  فریبی  کے ریگزاروں سے آگے  نکل کے دیکھوسب   کے   پاؤں  چھلنی  مگر  سبھی   عازمِ   سفر   ہیںکس  کو  دوں  صدائیں ، کون  میری  اب  سُنے  گا ؟میں کہ غریب ٹھہرا  اور ہمسفر …

غزل | دل وہیں لگا قسمت جہاں نہ تھی


خاک نہ تھی ہستی ، جُز تیرے شایاں نہ تھیہائے  دل  وہیں  لگا  ،  قسمت  جہاں نہ  تھیخدشوں کے بیچ ہی رہی خواہشِ اظہار  کہیںمیرے  واہمے کا دل  تو تھا ، زباں  نہ  تھینہ کرسکی میری آہِ دل نوازبھی تیرا دل گدازشاید  میری   فغاں  میں  خوبئ  بیاں  نہ  تھیتمام عمر رفاقت کو محبت سمجھتے …

کیسے کہوں تم اپنے ہو


ان دیکھے سپنے ہوکیسے کہوں تم اپنے ہولمحوں میں سب جان بھی لوںسچ تم کو مان بھی لوںجو بھی وعدے ہیں یا قسمیں ہیںپر دنیا کی اپنی رسمیں ہیںتمہی کہو اب تنہا کیسےدنیا سے لڑ پاؤں گا میںان دیکھے خواب سہارے توجگ سے ہر جاؤں گا میں'یہ رسمیں وعدے کچھ بھی نہیںہجر و وصال کی …

نظم | زندگی


تجھ سے بچھڑا تو یوں لگتا تھاجیسے زندگی ہی تمام ہوئی ہےتیرے چہرے کی ضو نہ رہی تو زندگی کی شام ہوئی ہےمیں سوچتا تھا، تکمیلِ آرذو نہیں تو زندگی کسی کام کی نہیںمگر اب یہ مجھکو احساس ہوا ہےخوابوں کے جزیروں سے پرے بھیزیست کا نشاں ہے آباد حقیقت کا اک جہاں ہےوہ جنکے خواب …

ترکِ مراسم


صبحیں بھی وہی، ہے شام بھی وہیکاروبارِ ہستی بھی، زیست کا ہنگام بھی وہیغمِ ہستی بھی وہی، دردِ انجام بھی وہیہم بھی وہی، تلخیء ایام بھی وہیہاں مگر تم سے بچھڑ کر اب ہر پلدل بوجھل بوجھل رہتا ہےاور سچ بھی ہے کہ جیتے جیتےمرنا کس کو اچھا لگتا ہےپر سچ سنتی ہو تو دیکھومجھ …