غزل | سب لٹا کر بھی دل میں جو سکوں ہے 


سب  لٹا  کر بھی  دل  میں جو  سکوں ہے
سحر انگیریَ حسن کہ محبت کا فسوں ہے
کسے سمجھا وَں ، اس معرکہ دل میں یارو
اک طرف ہے خرد اور مقابل پہ جنوں ہے
چھین       کر     مسکان      میری     اب
وہ     کہتے    ہیں    فسردہ   کیوں     ہے
دیکھو   تو  کیا   ہے   بلا  کا  قیامت  خیز
کہنے    کو   فقط   اک   قطرہَ   خوں   ہے
سکھلا   دےَ  عشق   نے  آداب  تسلیم  آخر
گےَ  دن  ہر  بات  پہ  کہہ  دینا کہ یوں ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: