غزل | کبھی اے کاش میں یہ معجزہ ِ ہُنر دیکھوں


 کبھی  ، اے    کاش ،  میں  یہ  معجزہ ِ  ہُنر  دیکھوں
تیرے   مزاج   پہ    اپنے    لہجے  کا  اثر   دیکھوں   
 ترک ِ خواہش  ہی  ہوئی  تکمیل ِ حسرت نہیں دیکھی
خواہش  ہے کہ عُمر تیرے ساتھ کرکے بسر دیکھوں
تلخ  یادیں  ہیں ، تشنہ  کامی  ہے ، حسرتیں ہیں مگر
جنوں  کہتا  ہے  کہ  عمرِ رفتہ  کو  بارِ  دگر دیکھوں
تجھ  کو  زمانے  کی  فکر  بھی ،  انجام کا خوف بھی
میں  یہ  کہتا   ہوں ، جو  کرنا  ہے  بس  کر  دیکھوں
تنہا  ہوں ،  تو  گھر  میں   بھی   صحرا  سی  وحشت
تُو   ہم  سفر جو  ہو ،  تو صحرا کو بھی گھر دیکھوں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: