نظم | چلو اک نظم لکھتے ہیں


چلو اک نظم لکھتے ہیں
کسی کے نام کرتے ہیں
مگر اب سوچنا یہ ہے،
کہ اس میں ذکر کس کا ہو
اس میں بات کس کی ہو
اس میں ذات کس کی ہو،
اور یہ بھی فرض کرتے ہیں،
کہ جس پہ نظم لکھتے ہیں
اس سے محبت کرتے ہیں
ہمارے سارے جذبوں کو
بس اسکی ہی ضرورت ہے
اظہار کی خاطر
اک نظم کی حاجت ہے،
چلو اک کام کرتے ہیں
کہ ہم جو نظم لکھتے ہیں
تمھارے نام کرتے ہیں
تمھی عنوان ہو اسکا
تمھارا ذکر ہے اس میں
تمھاری بات ہے اس میں
تمھاری ذات ہے اس میں

chalo ik nazm likhtay hain
kisi ke naam kertay hain
magar ab sochna ye hai
ke iss mein zik’r kiska ho
iss mein baat kiski ho
iss mein zaat kiski ho
aur ye bhi farz kertay hain
ke jis pe naz’m likhtay hain
uss se mohabbat kertay hain
hamary saray jazbo’n ko
bas uski hi zarurat hai
izhar ki khatir
ik nazm ki hajat hai
chalo ik kaam kertay hain
ke hum jo naz’m likhtay hain
tumharay naam kertay hain
tumhi unwaan ho iska
tumhara zik’r hai iss mein
tumhari baat hai iss mein
tumhari zaat hai iss mein

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s