نظم | چاند کی چودھویں رات کا گیت


دن کا اجلا ماتھا چومو
رات سے گہری بات کرو
گنگناوَ گیت سرمئی شام کی چاہت کا
افق سی کوئی سنہری بات کرو
ذکر چھیڑو آج چاند ستاروں کا
بچھڑے ہوئے سب پیاروں کا
پلکوں پہ تکے آنسو برسنے دو
سینے میں مچلنے دو ارمانوں کو

درد کے دریا کو احساس کے پار اترنے دو
آنچ دینے دو سب زخموں کو
آج کی رات تو غم کا سرمایہ ہے
سرمائے کو کاوِ عشق میں لگ جانے دو
جی بھر کے رو لو آج کی رات 
آج آنکھوں میں خواب سلگ جانے دو

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s