غزل | کبھی اے کاش میں یہ معجزہ ِ ہُنر دیکھوں


 کبھی  ، اے    کاش ،  میں  یہ  معجزہ ِ  ہُنر  دیکھوںتیرے   مزاج   پہ    اپنے    لہجے  کا  اثر   دیکھوں    ترک ِ خواہش  ہی  ہوئی  تکمیل ِ حسرت نہیں دیکھیخواہش  ہے کہ عُمر تیرے ساتھ کرکے بسر دیکھوںتلخ  یادیں  ہیں ، تشنہ  کامی  ہے ، حسرتیں ہیں مگرجنوں  کہتا  ہے  کہ …

Advertisements

غزل |  گر عشق ہے تو پھر بہانے کیسے


تم تو  اپنے  تھے ، ہوئے بیگانے کیسےذرا  سی بات کے بن گئے فسانے کیسےابھی سنبھلا ہی نہیں تھا کہ پھر اسیر ہواچشمِ  یار ،  بیٹھے تیرے  نشانے کیسےنبھانا  تو کیا ، اب وعدہ  ہی نہیں  کرتےبارِ  خدایا  ،آگئے ہم پر یہ زمانے کیسےایسا   بھی   نہیں   کہ    ہم   بھول   …

غزل |  ہم    نے   مانا  وہ   حُسن  و  غنا   کا   پیکر   لیکن


ہم    نے   مانا  وہ   حُسن  و  غنا   کا   پیکر   لیکنہم رونق افروز نہ ہوں ، پہلوئے جانانہ کدھر جائیگایہ محفل نہ رہی، کہیں اور سہی، محفل تو جمے گیبادہ کش ہی جو نہ ہونگے تو مے خانہ کدھر جائیگاابھی رات جواں ہے، ابھی سے نہ بجھاوَ شمعوں کوشمع   …

غزل | اسیری میں مر جانے دے ، قید سے اب آزاد نہ کر


اسیری  میں  مر  جانے  دے ، قید  سے  اب  آزاد  نہ  کرتجھے   واسطہ  میری تباہی کا یہ ظلم میرے صیاد نہ کرنہ   کر   توہینِ   محبت ، یوں  وفا  کی  گواہی  مانگ  کرمجھے بھول چکی  ہے دنیا ، اب تو بھی مجھے یاد نہ کربات  تیری  انا   کی  تھی  ،  میں …