غزل | آسائشیں چھوڑ دیں اب ضرورتوں کا کیا کروں


آسائشیں چھوڑ دیں اب ضرورتوں کا کیا کروں
خود بھوکا رہ بھی لوں پر بچوں کا کیا کروں
میرا ضمیر سلامت، ہے نیک و بد کی خبر بھی
انسان ہوں آخر، اپنی مجبوریوں کا کیا کروں
تُو ہوا جو میرا ہمسفر، عزیز تر ہوا راستہ
رہگزر پہ دل لگے تو منزلوں کا کیا کروں
ہجراں جانگسل سہی مگر نوشتہ وصال ہے
قربتوں کے بیچ حائل ان فاصلوں کا کیا کروں
اک دنیا بُلا رہی کہ عظمتیں ہیں منتظر
اور تیری پھیلی ہوئی بانہوں کا کیا کروں
ابرار قریشیؔ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s