غزل|دل کا بازار سجا رہا ہوں میں


خوابوں   کے  انبار  لگا  رہا  ہوں میں
دل    کا   بازار  سجا   رہا   ہوں   میں
آ   پھر  سے   میری   دنیا  اُجاڑ    دے
بہت  آج   کل   مسکرا  رہا   ہوں   میں
 روکنا  ہو  تو  اب  روک  لے  مجھ  کو
تیری محفل سے اٹھ کے جا رہا ہوں میں
ہرچند تجھ سے نہیں امید اب دادِ سخن کی
عادتاً   ہی  حالِ   دل   سنا  رہا  ہوں  میں
تیری  ضد پہ چل  کے بھی دیکھ  لیا  ہے
تیری   ہی   جانب  چلتا  جا رہا  ہوں میں
بھول   جاؤں   اب   کے   برس   تجھ  کو
خود   کا   حوصلہ   بڑھا   رہا   ہوں میں
تیرے    فراق    میں   اے   میرے    ہمدم
وقت  کی طرح  گزرتا  جا رہا  ہوں   میں

3 Replies to “غزل|دل کا بازار سجا رہا ہوں میں”

  1. @Saqib Saeed:
    اصلاح کوئی کرتا نہیں۔ کوئی استاد بتائے میں خود چاہتا ہوں کہ کسی استاد کو دکھا لیا کروں اپنی تک بندی بلاگ پر لانے سے پہلے۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s