غزل | تیری عنایتوں پہ گلہ نہیں ہرچند بے معنی و بے اثر ہیں


تیری عنایتوں پہ گلہ نہیں ہرچند بے معنی و بے اثر ہیں
کہ میرا  کُل اثاثہ ،  لفظ  ہیں یہی ، سو  تیری  نذر  ہیں
خود  فریبی  کے ریگزاروں سے آگے  نکل کے دیکھو
سب   کے   پاؤں  چھلنی  مگر  سبھی   عازمِ   سفر   ہیں
کس  کو  دوں  صدائیں ، کون  میری  اب  سُنے  گا ؟
میں کہ غریب ٹھہرا  اور ہمسفر سبھی صاحبِ  زر ہیں
ہے  جس  رہگزر  سے  گُریز  مجھے ، اسی پہ تیرا آشیاں
تیرے آشیاں  کی  راہگزر  پہ خواہشوں کے کھنڈر ہیں
سیاہ   رات  کے  پیرہن   سے  جھانکتے  یہ   ستارے
تیرگی   کے   آنچل  میں  نئی   صبح   کے  مظہر    ہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: