غزل | یوں فراموش کروں تم کو کہ عمر بھر یاد آ نہ سکو


یوں فراموش کروں تم کو کہ عمر بھر یاد آ نہ سکو
اور  مجھ  کو جو بھو لنا  چاہو تو پھر بھلا نہ سکو
نہ  اس  قدر  بے  رخی  سے  پیش  آؤ  آج  کہ  کل
سرِ  راہ  گزر  ملو  کہیں  تو نظر بھی ملا  نہ سکو
ہم  کو  گلہ  نہیں  مگر  پندارِ محبت کی  ہے یہ تمنا
یاد  ہم  دلائیں  عہدِ  وفا یوں کہ  تم  جٹھلا  نہ  سکو
اصلِ   محبت   کچھ   نہیں  ،  بجز  وارفتگی ء  دل
ہم  نہیں ، غیر  سے  بھی  ممکن  ہے  نبھا نہ  سکو
نئے سفر پہ  نکلے ہو ، واپسی  کا رستہ کھلا رکھنا
کہ راہگزر دشوار ملے اور لوٹ کر بھی جا نہ سکو

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s