بلا عنوان



سردیوں کی طویل راتوں میں
بے ربط گفتگو تا وقتِ سحر
خامشی کے سلسلوں میں کہیں
تمھاری سرگوشیوں کی لہر
بے نام آنسوؤں کے سیلِ رواں میں
سسکیوں کا موہوم سا وقفہ
مجھے اب تلک یاد ہے وہ،
 آغازِ محبت کا پہلا مرحلہ
نہ جھگڑا خرد و جنوں کا
وفا جفا کے وعدے نہ قسمیں کوئی
سیدھی سی تھی سانسوں کی ڈور
اک دوسرے سے لپٹی ہوئی
لمحوں کی جو بات تھی وہ
سالوں میں ڈھلتی رہی بڑھتی رہی
باتوں سے جو بات نکلی تھی وہ
 سانسوں کی صورت چلتی رہی
نجانے کہاں سے آیا اچانک
پھر موسم تغافل کا، رنجشوں کا
کوئی اجنبی سا بادل جو لے کر آیا
نہ ٹوٹا پھر زور بارشوں کا
وہ جل تھل ہوا کہ الاماں
سالوں کی محنت سے جو تھا بنا
اک آن میں اجڑا
اپنے خوابوں کا آشیاں
اب، تنہائی کی طویل راتوں میں
رت جگے ہیں الجھنیں ہیں تا وقتِ سحر
خامشی کے سلسلوں میں گونجتی ہے
تمھاری سرگوشیوں کی موہوم لہر

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: