فرض کرو


فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے
دریدہ دل کے دامن میں اب جو ہیں
کبھی وہ پھول نہ کھلے ہوتے
کار ہائے دنیا سے جو ملے ہم کو
وہ چاک تمھاری رفاقتوں سے نہ سلے ہوتے
!فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے
تو آج اس حسیں موڑ پر اجنبی جیسے
مل بیٹھتے اور اک نیا آغاز کرتے
تم اپنی مسکراہٹ سے چھیڑتی راگنی
ہم دل کو مدعا، دھڑکنوں کو آواز کرتے
فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے
تم اپنی دنیا میں گم سم 
الگ سے خواب بنا کرتی
ہم اپنے خیالوں میں گنگناتے
کوئی دور ہمیں سنا کرتی
!فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے
دریدہ دل کے دامن میں اب جو ہیں
کبھی وہ پھول نہ کھلے ہوتے
تو اب جو ملال گزرے دنوں کا ہے
وہ کسی اور شخص سے منسوب ہوتا
ہم تم اجنبی ہی رہتے جو عمر بھر
تو سوچو کتنا خوب ہوتا
نہ چاہتیں ہوتیں، نہ رنجشیں بنتیں
آرذویں جو دل میں دبی رہتیں
ایسے نہ آنکھوں کی بارشیں بنتیں
نہ تمھیں کچھ ہماری خبرہوتی
نہ ہمیں کوئی تمھاری فکر ہوتی
نہ جھگڑے وفا جفا کے ہوتے
نہ ہی کوئی ہجر و وصال کے سلسلے ہوتے
!فرض کرو ہم کبھی نہ ملے ہوتے
farz kro hum kabhi na milay hotay
dareeda dil ke daman mein ab jo hain
kabhi woh phool na khilay hotay
kaar haye dunia se jo milay hum ko
wo chak tumhari rafaqaton se na silay hotay
farz kro hum kabhi na milay hotay
to aaj iss haseen morr pe ajnabi jese
mil beth-tey aur ik naya aghaz kertay
tum apni muskarahat se cherti raagni
hum dil ko muda’a dharkanoo ko awaz krte
farz kro hum kabhi na milay hotay
tum apni duniya mien gum summ
alag se khuwab buna kerti
hum apne khayalon mein gungunaty
koi dur humen suna kerti
farz kro hum kabhi na milay hotay
dareeda dil ke daman mein ab jo hain
kabhi woh phool na khilay hotay
to ab jo dil mein malal hai guzray dinoo ka
wo kisi aur shakhs se mansoob hota
hum tum ajnabi hi rehtay jo umr bhar
to socho kitna khoob hota
na chahten hoti’n, na ranjishe’n banti’n
arzue’n jo dil mein dabi rehti’n
na aese ankhon ki barishen banti’n
na tumhe hamari kuch khabar hoti
na humen koi tumhari fiqr hoti
na jhagray wafa jafa ke hotay
na koi hijr o wisal ke silsilay hotay
farz kro hum kabhi na milay hotay!

2 thoughts on “فرض کرو

Add yours

  1. بہت خوب لکھا ہے – پر محبت کو ہمیشہ ایک نکھارِ صبح نو کی طلب رہتی ہے- جدائیوں کی لذتوں میں ملن کی پکار رنگ لے آئے تو اس سے بڑا دھنک رنگ کوئی نہیں
    “فرض کرو ہم کبھی نہ جُدا ہوتے ”

  2. شکریہ۔ بالکل درست کہا آپ نے۔ مگر وہ کیا ہے کہ زخم ابھی ہرا ہے کچھ دن لگیں گے اس لالی پہ ہریالی آنے میں، پھر دھنک سے آپ بھی لطف اندوز ہوئیے گا اور میں بھی۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: