کیسے کہوں تم اپنے ہو


ان دیکھے سپنے ہو
کیسے کہوں تم اپنے ہو
لمحوں میں سب جان بھی لوں
سچ تم کو مان بھی لوں
جو بھی وعدے ہیں یا قسمیں ہیں
پر دنیا کی اپنی رسمیں ہیں
تمہی کہو اب تنہا کیسے
دنیا سے لڑ پاؤں گا میں
ان دیکھے خواب سہارے تو
جگ سے ہر جاؤں گا میں
‘یہ رسمیں وعدے کچھ بھی نہیں
ہجر و وصال کی راتیں کچھ بھی نہیں’
ہاں ٹھیک ہے تم جو کہتے ہو
پر دنیا کی پیارے، ریت نرالی ہے
تم خواب نگر میں رہتے ہو
سچ ہو جھوٹ ہو کیا ہو ، معلوم نہیں
حقیقت ہو یا قصہ ہو، معلوم نہیں
ان دیکھے سے سپنے ہو،
کیسے کہوں تم اپنے ہو

un dekhay sapnay ho
kese kahun tum apne ho
lamhon mein sab jaan bhi loon
sach tum ko maan bhi loon
jo bhi waaday hain ya qasmen hain
per duniya ki apni rasmen hain
tumhi kaho ab tanha kese
duniya se larr paon ga mein
un dekhay khwab sahary to
jugg se har jaon ga mein
‘ye rasmen waday kuch bhi nahi
hijr o wasal ki raaten kuch bhi nahi’
haan theek hai jo tum kehtay ho
tum khawab nagar mein rehtay ho
sach ho jhoot ho kya ho maloom nahi
haqeeqat ho ya qissa ho maloom nahi
un dekhay se sapnay ho,
kesay kahun tum apnay ho

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s