نظم | کوئٹہ


گرد گرد منظر ہیں
زرد زرد چہرے ہیں
دیوار و در سے بے جھجک
افتادگی عیاں ہے
میرے شہر میں لوگ اب
اپنے سائے سے بھی ڈرتے ہیں
مسکراہٹیں ندارد ، اب تو
بات بھی احتیاط سے کرتے ہیں
بین کرتی ماوں کی صدائیں
روز کا منظر بن چکی
نفرتیں سرایت ہیں چار سو
پنڈی سے کوئٹہ، خیبر سے کراچی
بے سمت ہو چکا ہے قافلہ
غپر اٹھائے پھرتا ہے علم
اوروں کی خاطر میں نے 
خود اپنے سر کئے قلم
میرا راہبر ہی راہزن نکلا
کہوں کس سے داستان  الم
مفت ملتی ہے جو سر بازار 
خدایا تیری دنیا میں  اب
!…وہ جنس ارزاں ہوئے ہیں ہم

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s