نظم | میری محبت


میری محبت کوئلوں جیسی ہے
کہ جلتی بجھتی رہتی ہے
کبھی یہ گماں بھی ہوتا ہے
کہ کوئلہ بجھ چکا ہوگا
مگر پھر اچانک سے
ذرا سے ہوا کے جھونکے سے
سرخی دمکنے لگتی ہے
آگ بھڑکنے لگتی
پھر وہی حرارت ہوگی
ہھر وہی شرارت ہوگی
میری محبت اس ننھے بلب جیسی ہے
جو گھر کے باہر لان میں
مدتوں جلتا رہتا ہے
دن کو سورج کی روشنی میں
اوروں کی موجودگی میں
اسکی ہستی گم گم رہتی ہے
مگر جیسے ہی شام ڈھلتی ہے
آنگن میں اندھیرا ہوتا ہے
وہی ننھا منا بلب ہماری
راتیں روشن کرتا ہے۔۔۔

meri mohabbat ko’yalon jesi hai
ke jalti bujhti rehti hai
kabhi ye gumaan bhi hota hai
ke ko’yala bujh chuka hoga
magar phir achanak se
zara se hawa ke jhonkay se
surkhi damakney lagti hai
aag bharakney lagti hai
phir wohi hararat hogi
phir wohi shararat hogi
meri mohabbat uss nanhay bulb jesi hai
jo ghar ke bahir lawn mein
muddaton jalta rehta hai
din ko sooraj ki roshni mein
auron ki maujoodgi mein
uski hasti gum gum rehti hai
magar jese hi shaam dhalti hai
aangan mein andhera hota hai
wohi nanha munna bulb hamari
raaten roshan kerta hai

One Reply to “نظم | میری محبت”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s