غزل | ہم اہلِ خرد کی یوں بھی جنوں سے نسبت نہیں ملتی


ہم اہلِ خرد کی یوں بھی جنوں سے نسبت نہیں ملتی
کبھی ستارے نہیں ملتے ،  کبھی  قسمت  نہیں ملتی
تمنا   روز  کرتے  ہیں  تم  سے  مل ہی جا نے کی 
کبھی   رستہ  نہیں   ملتا  ،  کبھی اجازت نہیں ملتی
زیرِ غور  ابھی  تک  ہے ، معاملہ ترکِ مراسم  کا
کیا   کریں ، تیری  یاد  ہی  سے فرصت نہیں ملتی
اچھا  ہے  فیصلہ عداوت سے بدلنے کا ،  یوں بھی
محبت   کے   بدلے جہاں میں ،  محبت   نہیں  ملتی
اُسکے کمال  ہونے  میں  شک ہی   کیسا    دوستو
اُسکی  مجھ   سے   کوئی  بھی  عادت   نہیں  ملتی
سخن  وری  کمالِ  فن سہی،  لیکن ہنر نہیں قریشی
شاعری  سے  داد  تو ملتی  ہے  ، دولت  نہیں ملتی
ابرار قریشی
Advertisements

2 Replies to “غزل | ہم اہلِ خرد کی یوں بھی جنوں سے نسبت نہیں ملتی”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s