غزل| خُم و ساغر سے نہ بادہ و پیمانے سے


خُم  و ساغر سے نہ بادہ  و پیمانے سے
محفلِ تو سجتی ہے یار کے آ جانے سے
عقیدت ہے یا مجبوری، بات کوئی بھی ہو
تیرا ذکر آ ہی  جاتا ہے کِسی  بہانے سے
سمجھ سے با لاتر ہے یہ ماجرا محبت کا
گرہیں اور بھی لگتی ہیں ، سُلجھانے سے
انہی لوگوں  میں  رہتا  ہے  روز  و  شب
پھر  بھی  کتنا  جدا  لگتا ہے  زمانے سے
کتنی   ہی  اُونچی  کیوں  نہ   کر لے  اُڑان
پنچھی  کبھی غافل  نہیں ہوتا آشیانے  سے
                                        
                                                 ابرار قریشی          

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: