غزل | رات یوں رُخسار پہ تیری یاد کے آنسو مہکے


رات  یوں  رُخسار  پہ  تیری  یاد  کے  آنسو مہکے
اندھیری  رات  میں  جیسے تنہا  کوئی جگنو مہکے
پاکیزہ  چاندنی  سے کیسے مُعطر  ہورہی ہے فضا
تیرے  پہلو کی خوشبو سے جیسے میرا پہلو مہکے
تیز  ہوا   یوں   پتوں  سے  ٹکرا  کے  گزرتی  ہے
اک لمبی خامشی کے بعد جیسے تیری گفتگو مہکے
میں  اور  اک  غزل  لکھ  رہا  ہوں  تیرے  نام سے
تیرے  خیال  سے  میرے  وجدان  کی  آرذو مہکے
اک  بار  یوں  رکھ  دے میرے سینے  پہ  اپنا  ہاتھ
چاک گریباں رہے  نہ رہے تمام عمر یہ رفُو مہکے
               ابرار قریشی

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: