غزل | خانہء دل میں یاد ِ ماضی کے خزانے جاگے


خانہء دل  میں  یاد ِ ماضی  کے خزانے جاگے
پھر  تیری   یاد   آئی   پھر  درد  پُرانے  جاگے
خوابیدہ تھے  کب   سے گلستاں ہاےَ  خیال میں
اک  تیرے غم سے کتنے غم کے بہانے جاگے
جواں      پھر       ہوئی      رُت     بہار    کی
دل   میں   پھر   گزرے  ہوےَ   زمانے  جاگے
مچلنے لگی  وہی پہلی  سی  قربتوں کی خواہش
پہلو   میں  پھر  بچھڑے  ہوےَ  یارانے  جاگے
راز کی طرح جو سینہ ہاےَ جہاں میں دفن تھے
آج  پھر سے تیرے  میرے  وہ  فسانے  جاگے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: