غزل |  گر عشق ہے تو پھر بہانے کیسے


تم تو  اپنے  تھے ، ہوئے بیگانے کیسے
ذرا  سی بات کے بن گئے فسانے کیسے
ابھی سنبھلا ہی نہیں تھا کہ پھر اسیر ہوا
چشمِ  یار ،  بیٹھے تیرے  نشانے کیسے
نبھانا  تو کیا ، اب وعدہ  ہی نہیں  کرتے
بارِ  خدایا  ،آگئے ہم پر یہ زمانے کیسے
ایسا   بھی   نہیں   کہ    ہم   بھول   گئے
تم   یاد   ہی   نہیں  آئے ،  نجانے کیسے
کہہ    دین ے   میں    قباحت   کیا   ہے؟
گر   عشق   ہے   تو   پھر بہانے کیسے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s