غزل | اسیری میں مر جانے دے ، قید سے اب آزاد نہ کر


اسیری  میں  مر  جانے  دے ، قید  سے  اب  آزاد  نہ  کر
تجھے   واسطہ  میری تباہی کا یہ ظلم میرے صیاد نہ کر
نہ   کر   توہینِ   محبت ، یوں  وفا  کی  گواہی  مانگ  کر
مجھے بھول چکی  ہے دنیا ، اب تو بھی مجھے یاد نہ کر
بات  تیری  انا   کی  تھی  ،  میں  تو  یوں  بھی  چپ  تھا
ہونا  تھا  جو ،  ہو بھی  چکا ، رو رو کہ اب فریاد نہ کر
کھیل  نصیبوں  کا  دیکھ  لیا ، میں نے تنہا رہنا سیکھ لیا
فقط  اپنی  محبت  کی  خاطر ، میری جستجو برباد نہ کر
تجھے چھوڑ جانے کی عادت ، مجھے تنہائیوں کا خوف
اس خالی کمرے کو اے دوست میرے پھر سے آباد نہ کر

Advertisements

One Reply to “غزل | اسیری میں مر جانے دے ، قید سے اب آزاد نہ کر”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s