غزل | بے وفا جو ہم نہیں ، با صفا تم بھی نہیں


بے   وفا   جو   ہم   نہیں  ،   با صفا   تم   بھی  نہیں
ہم  جو    نہیں ،  ترکِ  تعلق  کی  وجہ  تم  بھی  نہیں
پھر   کیا  سبب    رشتوں    کا    ایسے   ٹوٹ   جانا
ناراض    ہم    بھی     نہیں  ،   خفا   تم    بھی   نہیں
دل  کے  رابطوں  کو  قربتوں کی حاجتیں کیا ہونگیں
واقفِ    حال    ہیں   ہم   تو   نا آشنا   تم   بھی   نہیں
بات  ساری  نصیب  کی  ہے ، محبتوں کے کھیل میں
گر  ہم  نہیں  ریاضت  کی  جزا ،  سزا  ، تم بھی نہیں
تمھیں ہے خشک مزاجی کا گلہ یہ زعم ہم کو بھی ہے
گر ہم  کٹھن  مزاج  ہیں تو ، دستِ  صبا ، تم بھی نہیں
ہم   سے   کس   بناء   پہ  کرتے  ہو بے بندگی کا گلہ
فرشتے   جو    ہم    نہیں   ،   خدا     تم    بھی    نہیں
bewafa jo hum nahi, ba safa tum bhi nahi
hum jo nahi, tarq-e-taluq ki wajah tum bhi nahi
phir kya sabab rishto’n ka aese toot jana
naraz hum bhi nahi, khafa tum bhi nahi
dil ke rabto’n ko qurbato’n ki hajate’n hi kya hongi
waqif-e-haal hain hum to na-aashn’a tum bhi nahi
baat saari naseeb ki hai, mohabbaton ke khel mein
gar hum nahi riyazat ki jaza, to saza tum bhi nahi
tumhen hai khusk mizaji ka gila ye za’em hum ko bhi hai
gar hum kathin mizaj hain to dast-e-saba’ tum bhi nahi
hum se kis bina’a pe kertay ho be-bandagi ka gila
farishtay jo hum nahi, khuda tum bhi nahi

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s